اگست 1, 2014

انقلاب،سنت رسولﷺاور ڈاکٹر طاہر القادری

Inqlab , Tahir ul Qadri, Green Revolution  آج کل ہرطرف انقلاب انقلاب کی صدائیں بلند ہو رہی ہیں ، آخر انقلاب ہے کیا ؟۔ انقلاب کی یہ تعریف کی گئی ہے کہ "یہ نظام حکومت میں بنیادی تبدیلی لانے کی کوشش ہے" لیکن کامیاب انقلاب بنیادی تبدیلی لانے کی کوشش سے بڑھ کر ہے۔ وہ عملاً سارے نظام کو بدل ڈالتا ہے۔ یہ طاقت کے ذریعے اور تیزی سے اقتدار کے بنیادی ڈھانچہ اور سماج میں فوائد و وسائل کی تقسیم   کو   کو بدل دیتا ہے۔ مثلا تحریک اصلاحات، Reformation، انقلاب انگلستان، 1788، انقلاب امریکہ، 1776، انقلاب فرانس،، 1689، بالشویک انقلاب روس، 1917، انقلاب چین، 1949، انقلاب مصر 1950، انقلاب کیوبا، 1957، اور انقلاب عراق 1958، کے نتیجہ میں نہ صرف متعلقہ ملکوں کا نظام حکومت بدل گیا بلکہ دور رس سماجی، اقتصادی اور تہذیبی تبدیلیاں بھی واقع ہوئیں۔
 انسانی تاریخ میں متعدد انقلابات پیش آئے ہیں۔ وہ طریقۂ کار ، مدّت ، اور ترقی پسند نظریاتی اصول کے معاملے میں بہت مختلف ہیں۔ ان کے نتائج کی وجہ سے ثقافت ، معیشت اور سماجی سیاسی اداروں میں ترقیاتی تبدیلیاں ہوئیں
ہر انقلاب کے پسِ پشت کچھ عوامل کارفرما ہوتے ہیں جو عملی انقلاب کے رونما ہونے سے پہلے انقلابی گروہ یا طبقہ یا پارٹی کو اس کے لیے تیار کرتے ہیں۔پاکستا ن میں انقلاب کا نعرہ بلند کرنے والی ڈاکٹر طاہر القادری کی ذات اور جماعت ہے،ڈاکٹر صاحب کی پہچان ایک مفسر، ایک محدث ،ایک اسلامی سکالر کی ہےاس کے علاوہ بہت کم لوگ جانتے ہیں کہ وہ قانون دان بھی ہیں اور پنجاب یونیورسٹی میں قانون کے استاد بھی رہے ہیں۔ آج کل ان کے خلاف جو پروپیگنڈہ کیا جا رہا اس کی حقیت کیا ہے ، کوئی کہہ  رہا ہے کہ یہ انقلاب نہیں بلکہ انتشار ہے، کوئی کہتا ہے جمہوریت ڈی ریل ہو جائے  گی۔کوئی کہتا ہے یہ انقلاب نہیں بغاوت ہے،  کوئی کہتا ہے کہ وہ ایک اسلامی سکالر ہیں وہ لوگوں کو  اسں طرح سے  اکسا کر اسلام کی تعلیمات سے روگردانی کر رہے ہیں۔  ڈاکٹر طاہرالقادری  پوری دنیا میں اسلای سکالر کے نام سے جانے اور پہہچانے جاتے ہیں  ، اور ایک مذہبی سکالر کے طورپر اپنا ایک الگ تشخص رکھتے ہیں، نبی احمد مجتبی حضرت محمد مصطفی ؐ نے فرمایا مفہوم حدیث ''علماء میرے دین کے وارث ہیں''  ڈاکٹر طاہر القادری ایک مذہی عالم ہیں کیا ان کا انقلاب کا نعرہ سنت رسول کے عین مطابق ہے یا نہیں؟ کیوں کہ جب ڈاکٹر صاحب انقلاب کی بات کرتے ہیں ، تو ان کے اس عمل کو پیغمر انقلابؐ کےانقلاب کے پیرائے میں دیکھا جائے گا کیا یہ سنت رسول کے مطابق ہے یا نہیں؟
  انقلاب اور سنتِ رسول ﷺ
وہ توچالیس سال صادق و امین کے نام سے جانے جاتے تھے جب تک ظلم کے خلاف آواز نہ اٹھائی تھی۔ آواز اٹھانے کی دیر تھی کہ لوگ دیوانہ بھی کہنے لگے، کوئی بولا کہ جادو گر ہیں، اور کوئی بولا کہ پیسے اور اقتدار کے لیئے ایسا کر رہے ہیں اور کوئی یہ کہتا ہوا نظر آیا کہ شہرت کی خاطر کر رہے ہیں۔آپ کا منشور توحید کے ساتھ ساتھ سب کی برابری اور سب کے حقوق کی پاسبانی تھا۔ غریب طبقہ نے حمایت شروع کی کہ انقلاب کی ضرورت مکہ کر سرداروں کو کہاں تھی !
اس انقلاب کے راستے میں سب سے پہلا خون عورت کا بہا۔ تیرہ سال آپ ﷺ صبر کے ساتھ برداشت کرتے رہے اور ان سب مظالم کے بعد بھی پر امن رہے یہاں تک کہ آپ کے شہر والوں نے آپ کو شہر چھوڑنے پر مجبور کر دیا۔
کئی سال مدینہ پاک میں آپ ﷺ اپنے اصحاب کی تربیت کرتے رہے۔ جنگیں بھی ہوئیں اوربے شمار قیمتی جانوں کا نقصان ہوا۔ آپ ﷺ کے چچا حضرت حمزہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو شہید کیا گیا۔ وہ احزاب میں تو آپ کے شہر مدینہ پر بھی حملہ آور ہوگئے۔کئی معاہدے بھی ہوئے اور کفار کی طرف سے خلاف ورزیاں بھی۔ان سب مصیبتوں کے بعد آخر کار آپ ﷺ اپنے شہر میں ایک عظیم فاتح کی حیثیت سے داخل ہوئے۔وہ تو تمام جہانوں کے مالک کے محبوب ہیں۔ چاہتے تو ایک دعا سے معجزانہ طور پر سب کو مسلمان کر لیتے اور بغیر کسی قربانی کے ایک اشارے پر مکہ بھی فتح ہو کر قدموں میں گِھر جاتا۔ مگر آپ نے ایک عام انسان کا راستہ اپنایا اور اپنی پوری امت کو تعلیم دی کہ انقلاب کیسے آتے ہیں۔۔۔
   ڈاکٹر صاحب ملک میں انقلاب لانا چاہتے ہیں،  ڈاکٹر صاحب نظام تبدیل کرنا چاہتے ہیں   ڈاکٹر صاحب کی  خواہش ہے کہ پاکستان میں ماں، بہن، بیٹی کی عزت محفوظ ہو جائے،    ڈاکٹر صاحب چاہتے ہيں کہ یہاں دس سال کے معصوم بچوں کے بازو کٹنے بند ہو جائيں،  ڈاکٹر صاحب چاہتے ہیں کہ یہاں ایم پی اے تھانے پر حملہ کرے تو    ڈاکٹر صاحب اس پر قانون لاگو کروانا چاہتے ہیں،  ڈاکٹر صاحب صبح و شام پاکستان کی بیٹیوں بہنوں کی لٹتی ہوئي عزتیں بچانے کے لئیے اس نظام کے خلاف آواز اٹھا رہے ہیں۔ لیکن ڈاکٹر صاحب یہ سب آپ چاہتے ہیں لیکن یہاں نوجوان، قوم کب چاہتی ہے کہ ان کی ماؤں بہنوں بیٹیوں کی عزتیں محفوظ ہو جائيں۔ ایک اسلامی ملک میں بہنوں کی عزتیں تار تار ہوتی ہیں لیکن ہم بیٹھ کر مسواک کی لمبائي پر بحث کرتے ہیں، کیونکہ مسواک کرنا سنت ہے لیکن شائد بہن بیٹی کی عزت بچانا سنت نہيں ۔۔۔۔۔اسلامی ملک میں پچاس فیصد سے زائد لوگ رات کو بھوکے سوتے ہیں، لیکن ہميں اس سے کیا ہم تو سنت کے پیروکار ہیں، ہم تبلیغ کے پیروکار ہیں، ہم عاشق رسول ہیں، ہمیں عشق رسول میں رونا تو آتا ہے لیکن رسول اللہ کی امت کی بہنوں کی عزت لوٹے یا بوڑھے بھوکے سو جائيں، باپ کے سامنے اس کی بیٹی کو اغواء کر کے اپنی ہوس کا نشانہ بنا دیا جائے، ہم ان کی مدد نہیں کر سکتے۔۔۔۔۔ ڈاکٹر صاحب آپ سے معذرت ہے
  
 یہ قوم، نوجوان، یہ مذھبی تنظیمیں، یہ سنتوں کے پیکر، یہ تبلیغ دین کے ٹھیکے دار پچھلے ساٹھ سال سے ماؤں، بہنوں، بیٹیوں کی عزتیں تار تار ہوتی دیکھ رہے ہیں، پاکستانیوں کو بھوکا مرتے دیکھ رہے ہیں، یہ پاکستان کو نیلام ہوتا دیکھ رہے ہیں، یہ ظالموں کو ظلم کرتا دیکھ رہے ہیں، یہ قاتلوں کو قتل کرتا دیکھ رہے ہیں، یہ ہوس کے پجاریوں کو قوم کی بیٹیوں کو ان کے بھائيوں کے سامنے عزت لوٹتا دیکھ رہے ہیں اور یہ دیکھتے رہیں گے۔ یہ اس نظام کے دیوانے ہیں، یہ نظام تبدیل نہیں کر سکتے۔۔۔۔
 یہ قوم آپ کا ساتھ نہیں دے گی اور آئيندہ کے  لئے بھی پاکستان کو نیلام ہوتا دیکھتی رہے گي۔ عزتیں تار تار ہوتیں رہیں گی، یہ مسواک کرتے رہیں گے یا شلوار پائنچے پر بحث کرتے رہيں  گے۔ان کی سنتوں اور تبلیغ کے مطابق ظالم کے خلاف خاموش رہنا سنت ہے۔۔
  ڈاکٹرصاحب ؛ وی آر ویری سوری۔۔۔۔۔ اس نظام کو بدلنا نہ تو سنت ہے، ہماری سنتوں میں ظالم کے خلاف آواز اٹھانا شامل نہیں۔

7 تبصرے:

mashal imaan نے لکھا ہے کہ

بہت اچھا جناب۔۔

Junaid Ahmed نے لکھا ہے کہ

السلام علیکم. .اچهی تمہید باندی جس کو سنت سے جوڑا جا رہا ہے.
اگر سنت ہے انقلاب تو ڈاکٹر صاحب کی داڑهی شریف سنت سے کیوں کم ہوئی جب کہ پہلے داڑھی شریف پوری تهی.
علم ہونا اور سکالر ہونا ایمانداری کی دلیل نہیں ہے.
اگر یوں کہیں کہ شطان بهی فرشتوں کا استاد تها علم میں عبادت میں سب سے آگے.
ڈاکٹر صاحب اپنا ملک خود چهوڑ کر گئے ہیں. اور کینڈا جیسے گندے ملک میں . مزہ تو تب تها کہ مکہ میں مدینہ طیبہ میں جاتے ...جہاں پہ وہ ہستی موجود ہے کجن کا اصل انقلاب اسلامی تها. اور اپنے ہی شہر میں فاتح کی حثیت سے آئے اوررہے.
ڈاکٹر نے پهر فحاش خانے میں لوٹ جانا ہے...

Usman Aziz نے لکھا ہے کہ

وعلیکم اسلام ۔۔ بھیا آپ ایک با ت یہ بتائے ڈاکٹر صاحب جو آواز بلند کر رہے ہیں کیا وہ ٹھیک نہیں ہے ۔ آپ ذات کی بات کر رہے ہیں میں ان کے پیغام کی بات کر رہا ہوں۔
اور جہاں تک با ت ہے داڑھی کی تو ایک سوال کا جواب دیں ۔ نبی مہرباں نے اپنی زندگی میں جو بھی کا م کیا وہ ہمارے لیئے سنت ہے یا نہیں۔۔۔ ؟ اس سوال کا جواب دیں اگلی بات پھر کریں گے۔

Rashid Idrees Rana نے لکھا ہے کہ

عثمان عزیز بھائی، اللہ پاک آپ کو کامیابی عطاء فرمائے۔ بہت اچھا بلاگ ہے آپ کا، اسی جذبہ کے ساتھ حق گوئی کو جاری رکھیں۔

بس میری اپنی ذاتی رائے ہے ، کہ ڈاکٹر صاحب والے معاملے میں تھوڑا پھر سوچ لیں، کیوں کہ جس بزنس کلاس میں سفر کرکے ڈاکٹر صاحب انقلاب برپا کرنے کو آئے ہیں اس بزنس کلاس کے ٹکٹ کی رقم سے زیادہ نہیں تو 4 یا پانچ غریب بچیوں کی شادی با عزت طریقے سے ہو سکتی تھی۔

مزید اگر ماضی قریب میں دیکھیں گے تو اسلام آباد میں ڈاکٹر صاحب ، جوان لڑکیوں، بچوں، عورتوں کو ساتھ لیکر جو انقلاب برپا کر چکے ہیں وہ بھی سب کو معلوم ہے۔

معذرت کے ساتھ، میرا مقصد آپ کا دل دکھانا نہیں ہے، شاید آپ مجھ سے زیادہ با علم ہوں، لیکن خدارا ایک بات پر توجہ مرکوز کریں، کہ جب تک بحثیت قوم ہم لوگ نہیں ٹھیک ہوں گے کوئی ہم پر انقلاب نہیں لاسکتا، ہاں البتہ انقلاب کے نام پر فساد ضرور برپا ہو رہا ہے، ڈاکٹر صاحب کا کیا گیا ہے لاہور میں جس بے رحمی سے لوگ مرئے ہیں۔ کیا کر لیا ڈاکٹر صاحب نے آ کر؟

مزید جو ڈرامہ اسلام آباد میں ہونیوالا ہے اللہ خیر کرئے پتا نہیں کیا ہوگا۔ ڈاکٹر صاحب تو ہر سیاہ ست دان کی طرح کینیڈا تشریف لے جائیں گے۔

باقی اللہ پاک بہتر جانتا ہے۔ شکریہ

افتخار اجمل بھوپال نے لکھا ہے کہ

مُحترم ۔ میرے چند اصول ہیں جن پر کاربند رہنے کی میں کوشش کرتا ہوں ۔ ان میں سے ایک کسی کی ذات پر تنقید نہ کرنا بھی ہے لیکن جب قومی یا اجتماعی معاملات میں آدمی کی گفتار اور عمل میں تفاوت ہو تو معاملہ ذاتی نہیں رہتا ۔
اول یہ کہ اللہ کا فرمان اٹل ہے ۔ سورت13الرعدآیت11إِنَّ اللّہَ لاَ يُغَيِّرُ مَا بِقَوْمٍ حَتَّی يُغَيِّرُواْ مَا بِأَنْفُسِہِمْ ۔ اللہ تعالٰی کسی قوم کی حالت نہیں بدلتا جب تک وہ خود اسے نہ بدلیں جو ان کے دلوں میں ہے۔
اس کے بغیر جو بھی انقلاب آئے گا اُس کے پیچھے اسلام نہیں شیطانی طاقت ہو گی
دوم یہ کہ طاہر القادری صاحب بہت اچھے اوریٹر ہیں ۔میں بھی کسی زمانہ میں ان کے عَلم سے مرعوب تھا ۔ 1990ء میں اپنے اُس وقت کے شہر کی بڑی مسجد میں ان کے ساتھ بیٹھ کر سیرت النبی پر ان کی تقریر سُنی تو پہلی بار ان کے متعلق تحقیق کا خیال آیا مگر کوئی ذریعہ نہ پا کر ان کا درجہ اپنے ذہن میں قائم رکھا ۔ میں لڑکپن سے قرآن شریف کو سمجھنے کی کوشش کرتا رہا ہوں ۔ جب طاہر القادری صاحب کا ترجمہ قرآن شریف انٹرنیٹ پر آیا تو میں اس سے استفادہ شروع کیا ۔ جس کے نتیجہ میں میں نے ان کا ترجمہ پڑھنا بند کر دیا کیونکہ اللہ سُبحانُہۃ و تعالٰی نے مجھے عربی سمجھنے کی توفیق عطا کر رکھی ہے ۔اس کے بعد ان کی کنیڈا اور برطانیہ میں تقاریر کی وڈیوز دیکھیں تو مجھے موصوف شیخ الاسلام کی بجائے شعبدہ باز نظر آئے ۔ اگر آپ نے سانحہ ماڈل ٹاؤن سے قبل اور اس کے دوران ان کے بیانات ٹی وی پر دیکھے اور سُنے ہوتے تو شاید آپ ان کی حمائت نہ کرتے ۔ آج ہی سہ پہر 5 بجے ان کا بیان اپنے انقلاب کی ابتداء کے بارے میں سُنا جس کا خلاصہ یہ ہے´اجتماع جاتی عمرہ میں ہوگا وہاں اُن کے گھر میں گھس جاؤ¶۔ یہ کس قسم کا انقلابی ہے جو اپنے مریدوں کو کسی کے ذاتی گھر میں گھسنے کی ترغیب دے رہا ہے؟

Usman Aziz نے لکھا ہے کہ

راشد ادریس رانا بہت شکر گزار ہوں آپ کی حوصلہ افزائی کا آپ نے میر ی اس کا وش کو پسند کیا بلاگ والی کو ۔۔۔
اور جہاں تک آپ نے شادیو ں والی با ت کی تو میں ان کی ویب سائٹ دیکھ رہا وہ یہ فریضہ سر انجام دیتے رہتے ہیں منہاج ویلفئر کے پلیٹ فارم سے ۔۔۔
اور ڈاکٹر صاحب لاکھوں لوگو ں کے لیڈر ہے 90 ممالک میں ان کی تنظیم ہے جب دوسرے لیڈر اپنے جہاز چارٹرڈ کرا سکتے ہیں اس کی بزنس کلاس پر اعتراض کیوں۔۔
اور آپ کی معلوما ت کے لیے عرض ہے وہ انقلا ب نہیں تھا۔ الیکش ریفارمز کا ایجنڈا تھا اگر اس پر عمل ہو جاتا تو الیکشن کے ذریعے ملک میں انقلاب آ جا تا۔
لاہور میں جو کچھہ ہوا اس کے ذمے دار ڈاکٹر صاحب تو نہیں ہے جی جو ہے وہ آپ جانتے ہیں۔۔
حق و باطل کی جنگ ہے ، یہ وقت ثابت کرے گا ۔۔

Usman Aziz نے لکھا ہے کہ

عزت مآب جناب افتخار اجمل بھوپال صاحب۔۔۔
ڈاکٹر صاحب کے حوالے سے آپ نے جو کچھہ لکھا وہ آپ کی ذاتی رائے ہے اس میں کوئی چیز ایسی نہیں ہے جس کا جواب دیا جائے کیوں کہ آپ نے ایک ذہن بنا لیا ہے پھر اس پر مہر ثبت کر رکھی ہے کیوں کہ آپ مفسر قرآں بھی ہے میرا علم ناقص ہےآپ کہاں میں کہاں۔۔۔
اور جو آپ خلاصہ بیان کر رہے ہیں وہ حقا ئق کو بر عکس بیان کر رہے ہیں۔ ۔۔ وہ کسی کا ذاتی گھر نہں عوام پاکستان کے حکمرانوں کا محل ہے ، عوام پاکستان اپنے مسائل کے حل کے بادشاہ سلامت کے آستانے پر بھی نہ جائے۔۔

اگر ممکن ہے تو اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔